یہ جَھٹ پَٹ کیسا ہجر ہوا ہے

March 6, 2021
159
Views

Muhammad Ehsan Ramzan is a young emerging Talent of Pakistan. Muhammad Ehsan Ramzan is an exquisite writer currently based in Islamabad. He is a accountant by profession and poet by heart.

یہ جَھٹ پَٹ کیسا ہجر ہوا ہے

سب کے ہیں ہم ویسے تو، پر تجھ بن کون ہمارا ہے
ہم اِنکو اُنکوتھامے ہوئے ہیں، پر اپنا تو ہی سہارا ہے

ضروری ہیں ہوا پانی بھی، کہنے کو زندہ رہنے کو
پر تو نہ ہو تو مر جائیں گے، اور کچھ نہ ہو تو گزارا ہے

جب زیست کی کشتی بھنور میں تھی اور قطعاًسب کچھ ڈوب رہا تھا
تب تم آۓ اور چیخ اٹھے ہم وہ دیکھو نہ کنارہ ہے

اررے ایسے تھک کے چھوڑ گئے، منہ مورؕ گئے تم میرے صنم
اور کل تک پل پل یوں کہتے تھے، “میں چاند تو میرا ستارہ ہے”

میرے جسم میں کانٹے پِروتے جانا، گر تم مجسے دُور گئے
کوئی چلتے پھرتے چھُو لے مجھ کو، کیا تُمکو یہ گوارا ہے

یوں قاتل نظریں چھپاؤ مت، ہمیں آنکھ اُٹھا کر دیکھ تو لو
کوئی دعوٰی نہیں ہے اُسپے جِسنے، اک مَرتے شخص کو مارا ہے

بہت دیکھے ہیں گرتے ہوئے، جانباز میدان عشق میں ہم نے
یہ جَھٹ پَٹ کیسا ہجر ہوا ہے، ایسے بھی بھلا کوئی ہارا ہے

اچھا اب ہم مرتے ہیں، اور جاؤ جا کر جی لو تُم
مجھے اپنی کرنی بھرنی ہے، یہاں سب میرا ہی خسارہ ہے

اور پھولوں سے بھر دو لِحّد میری، یا آگ لگا دو ہستی کو
کرتے پھرو اب دل چاہے جو، تم پے کس کا اجارہ ہے

Written By : محمّد احسان رمضان

Comments are closed.